اوہ ترکی اے پاکستان نئیں ،،،
ایتھے تجربہ کار شریف اہن اردگان نئیں
(پاکستانی قوم بھی ٹینکوں کے سامنے کھڑے ہونے کی عظیم الشان تاریخ کی حامل ہےلیکن اس وقت جب ملکی سالمیت و بقا کو خطرہ ہو،اس کا دوسرا پہلو یہ بھی ہے جو قوم اپنوں بچوں کے منہ سے نوالہ چھیننے والوں کے خلاف نہیں کھڑی ہوسکتی ٹیکس ادا کرنے کے باوجود صحت تعلیم اور پینے کا صاف پانی تک نہ ملنے کے باوجود چُپ ہے وہ قوم حکمرانوں کی عیاشیاں اور شاہ خرچیوں کے دفاع کے لیے کیونکر نکلے گی پس ثابت ہوا اگر حکمران کاروباری نہ ہو ملکی سالمیت کو مقدم رکھے طرز حکومت بہتر ہو عوامی خدمت گار ہو کرپشن سے پاک ہو ملک دشمن عناصر کے ساتھ گھٹ جوڑ نہ رکھےعوام کی قاتل نہ ہو وعدوں کی پاسدار ہو صادق اور آمین ہو موروثی سیاست نہ ہو خاندانی اجارہ داری نہ ہو اختیارات کا نا جائز استعمال نہ ہو پانامہ لیکس اور منی لانڈرنگ میں ملوث نہ ہو تو قوم ٹینکوں کے سامنے بھی سینہ سپرد ہوتی ہے لیکن اگر بیان کی گئی خصوصیات منتحب حکومت میں ہوں تو قوم پھر ٹینک والوں سے امید باندھ لیتی ہے اور اس میں کوئی مضائقہ بھی نہیں
اللہ تعالی ترکی کے مسلمانوں اور عالم اسلام کی حفاظت فرمائے حکمرانوں کو عوام کے حقیقی خادم بن کر امور مملکت چلانے کی ہمت و ہدایت عطا فرمائے اور دنیائے کفر کی تمام سازشوں کو ناکام بنائے آمین ،،،ترک عوام و اردگان زندہ باد …….. پاکستانی عوام اور حکمران ؟؟؟