تجاوزات ، تجاوزات ، تجاوزات 

سن سن کے کان پک گۓ ۔ عرصہ دراز سے تجاوزات کے نام پر سیاست ہو رہی ہے کبھی اٹھا دیا جاتا ہے کبھی بٹھا دیا جاتا ہے ۔ کبھی سوچا ہے کہ اس کے قصوروار کون ہیں ۔ اس میں قصور وار ہمارے لوکل سیاسی حکمرانوں کیساتھ ساتھ یہ ہمارے ٹھیہ بان اور ریڑھی والے بھی قصوروار ہیں ۔ انھیں تھڑے بنا کے دیۓ گۓ ان کے لیۓ ایک حد مقرر کی گئی تھی مگر انھوں نے اپنی حد سے تجاوز کیا تھڑوں کو چھوڑ کر راستے کے درمیان بیٹھ گۓ اور روز بروز گزرنے والا راستہ تنگ سے تنگ کرتے رہے ۔ جس کی وجہ سے خاص کر ہماری ماؤں بہنوں کو گزرنے میں سخت دشواری محسوس ہوتی تھی۔ دوسرا سب سے بڑا قصور ان کا کہ جو ہمارے شہر کی پہچان بازار میں چشمے تھے ان کی کیا حالت کی انھوں نے ۔

اسی طرح قصوروار ہمارے سیاسی حکمران ہیں وہ اس پہ سیاست کرتے رہے ۔ اب یہ ان پہ بھلا کریں کہ انھیں کہیں جگہ فراہم کریں اور ترتیب سے ایک جتنی جگہ دے کر بٹھائیں ۔ کوڑا کرکٹ پھینکنے کے لیۓ ایک دو جگہ مقرر کریں اور بلدیہ کے ملازمین جو کؤرا کرکٹ اتھانے کے لیۓ ڈیوٹی دیتے ہیں ان سے سختی کیساتھ روزانہ کی بنیاد پر وہ کوڑا کرکٹ اٹھوائیں ۔ مقرر کردہ قوانین کی خلاف ورزی اگر کوئی ٹھیہ بان کرے تو اس کو ایک دو وارننگ دیں اگر باز نہ آۓ تو اس سے جگہ خالی کروا لی جاۓ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اسی طرح شہر میں پارکنگ کا بہت بڑا مسئلہ ہے جو تھوڑی بہت جگہ ہے وہاں ٹیکسیاں اور رکشے کھڑے ہوتے ہیں انھیں بھی ایک مخصوص جگہ فراہم کی جاۓ ۔ اور اس سے ہٹ کر اگر کوئی ٹیکسی یا رکشا کھڑا کرے تو اس کیخلاف سخت کاروائی کیجاۓ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شہر میں جو لاری اڈہ ہے ویگنیں وغیرہ صرف اڈے پر ہی کھڑے ہونے کی اجازت ہو مین چوک ڈلوال روڈ پر جو ویگنیں کھڑی ہوتی ہیں وہاں نہ کھڑی ہونے دی جائیں ۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شہر میں پکی دکانوں والوں نے جو تجاوزات کی ہوئی ہے اسے بھی بلا تفریق ایک سرے سے آخر تک ختم کیا جاۓ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شہر میں گلی محلوں یا سڑکوں پہ اگر کسی نے تجاوزات کی ہوئی ہے تو اسے بھی بلاتفریق ختم کیا جاۓ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اور روز روز تجاوزات کا ڈرامہ ختم کیا جاۓ اور ایک ہی بار مکمل آپریشن کیا جاۓ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آخر میں شہر کے سیاسی حکمرانوں سے نہایت ادب سے درخواست ہے کہ وہ شہر کا یہ دیرینہ مسئلہ حل کریں ۔ اس سلسلے میں ہم سب ان کے پاس بھی جائیں گے اور ان کی خدمت میں ادب سے درخواست کریں گے کہ اب سیاست چھوڑیں اور عملی طور پر شہر کی خدمت کریں۔

تحریر::  خالد محمود